Breaking News

پاکستان آرمی اور پاک پولیس کے مابین کیا فرق ہے؟

پاکستان آرمی اور پاک پولیس کے مابین کیا فرق ہے؟


پاکستان آرمی اور پاک پولیس کے مابین کیا فرق ہے؟

پاکستان آرمی:
یہ وہ فورس ہیں جنکا دنیا میں ثانی نہیں۔ ایک دفاعی فورس ہونے کے ناطے لوگوں کی آخری امید ہیں۔
جہاں عزت و احترام کی بات ہے تو پاکستان میں اگر عزت ہیں تو وہ پاک فوج کی بے شمار قربانیوں سے ہیں۔
نشیب و فراز کے ہر موڑ پر ڈٹ کرمقابلہ کرنے والا فورس ہیں۔

پاکستان پولیس:
یہ وہ فورس ہیں جنکی بدولت لوگوں کی عزت مال و احوال محفوظ ہیں۔ کسی ملک میں نظام تب تک صحیح نہیں ہوسکتا جب تک پولیس اور عوام شانہ بشانہ نہ چلے۔
ملک کا اندرونی دفاع کا دارومدار پولیس پر ہوتا ہے۔
ایک صوبائی فورس ہونے کی وجہ سے محتلف حکمرانوں کے تابع رہتا ہیں۔

بات ہیں عزت و احترام کی۔

آرمی:
ایک دفاعی فورس ہیں۔ لوگوں کے ساتھ واسطہ نہیں بلکہ سرحدوں کی حفاظت کرتے ہیں۔
پولیس:
صوبائی فورس ہیں اور بلواسطہ لوگوں کے ساتھ ساتھ ہر پیش رفت کا زمہ دار ہیں۔
آرمی:
سہولیات ، میڈیکل فری ، کھانا فری ، آمدورفت فری ، تعلیم فری
پولیس:
کوئی سہولت فری نہیں۔
آرمی:
ایک سربراہ۔
پولیس:
عوام سربراہ ، میڈیا سربراہ ، سیاسی جماعتیں سربراہ۔
آرمی:
اس لیے رشوت سے پاک کیونکہ عوام کے ساتھ واسطہ نہیں۔ سوا سرحدوں کے اور کسی کام کا زمہ دار نہیں۔
پولیس:
ایسا چیز نہیں جس میں پولیس کا کام نہیں۔ لوگ جرم کرتے ہیں اور پھر جان چھڑانے کیلئے خود پولیس کو رشوت پر آمادہ کرتے ہیں۔
عوام کی کم علمی کی وجہ نہیں بلکہ عدالتی نظام سے اور مار پیٹ سے ڈر کر زیادہ سے زیادہ رشوت کی پیشکش کرتے ہیں۔
آرمی:
شروع سے ایک سربراہی میں اس کیے قابل عزت بنے۔
پولیس:
ہر بدلتے سیاست کے ساتھ خدا بدل جاتا ہے۔
اور یہ حکمران پر ہوتا ہے کہ وہ پولیس کو کس طرح رکھتا ہیں۔
آرمی:
ڈیوٹی پر کھڑا سولجر صرف اپنے آفیسرز کو جوابدہ ہوتا ہے اور اپنا آفیسر ان کے کام پر ڈٹ کر کھڑا ہوتا ہے۔
پولیس:
کی بے زاری اتنی ہیں کہ وہ کسی بڑے آدمی پر ہاتھ نہیں اٹھا سکتا کیونکہ آپ بہتر جانتے ہیں پھر وہی پولیس ذلیل ہوجاتا ہے۔ پولیس میں اچھے اور برے دونوں کو ایک ہی آنکھ سے دیکھا جاتا ہے۔

اصلاحات:
پولیس تب تک اپنا عزت و احترام واپس نہیں لا سکتا جب تک ان کے مسائل کو حل نہیں کیا جاتا۔
رشوت ستانی کرنے والے پر پولیس افسر کو سخت سزا مگر سہولیات سے آراستہ کرنا۔
اپنی ڈیوٹی کرکے پھر سپیشل ڈیوٹی خاص کر محرم الحرام اور پولیومہم پر۔
محرم الحرام میں اتنے اہل تشیع نہیں ہوتے جتنے پولیس اہلکار ۔
عوام پولیس کی مخالف ، سیاست مخالف تو پولیس کس کو اپنا فریاد آزر کریں گا۔

التجاء:
عوام کو چاہیے کہ پولیس کو ایک بار محبت سے دیکھیں پھر کس طرح نہیں بدلتا ۔
کے پی کے پولیس نے چند سالوں میں جتنا عزت کا سفر طے کیا چند اصلاحات کی وجہ سے مگر سہولیات سے اب بھی محروم۔
آرمی کی طرح پولیس کے بھی ہسپتال ، سکول و کالج ، ٹاؤن اور آمدورفت کے مسائل حل کرنے سے ہی پولیس اپنی ڈیوٹی سے اور محبت رکھے گا ۔

No comments:

Post a Comment