Breaking News

عدالت نے آسیہ بی بی کیس کا فيصلہ قرآن و سنت کے مطابق کیا گیا یا کسی اور کے دباؤ پر کیا گیا

عدالت نے آسیہ بی بی کیس کا فيصلہ قرآن و سنت کے مطابق کیا گیا یا کسی اور کے دباؤ پر کیا گیا

عمران خان نے کہا ہے کہ عدالت عظمیٰ کے ججز نے آسیہ بی بی کیس کا فیصلہ آئین اور قرآن و سنت کے مطابق دیا ہے۔

قوم سے خطاب میں وزیراعظم نے کہا کہ مدینہ کے بعد پاکستان دنیا کی واحد ریاست ہے جو اسلام کے نام پر بنی اور یہاں ملک کا کوئی قانون قران و سنت سے بالاتر نہیں۔
وزیراعظم نے کہا کہ آسیہ بی بی کیس سے متعلق آج سپریم کورٹ کا ایک فیصلہ آیا جس پر ایک چھوٹے سے طبقے نے ردعمل دیتے ہوئے چیف جسٹس کو واجب القتل اور آرمی چیف کو غیر مسلم قرار دیا جو کہ ناقابل فہم ہے۔
سپریم کورٹ کا آسیہ بی بی کو رہا کرنے کا حکم
انہوں نے کہا کہ عدالت عظمیٰ کے فیصلے پر چیف جسٹس اور آرمی چیف کے خلاف غیر شائستہ زبان کا استعمال کرنا دانشمندی نہیں۔
وزیراعظم نے کہا کہ ججوں کے قتل اور فوج میں بغاوت کی باتیں ملک دشمنی ہے اور عوام ایسے لوگوں کی باتوں میں نہ آئیں، فوج نے دہشت گردی کی جنگ سے پاکستان کو نکالا اور قربانیاں دیں۔
انہوں نے کہا کہ سیاست چمکانے کےلیے یہ عوام کو اکسا رہے ہیں اس لیے ان کو مشورہ دیتا ہوں ریاست سے نہ ٹکرائیں بصورت دیگر ریاست اپنی ذمہ داری پوری کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ کوئی توڑ پھوڑ اور سڑکیں بھی بند ہونے نہیں دیں گے کیونکہ سڑکیں بند ہونے سے غریب عوام کو نقصان ہو رہا ہے۔


وزیراعظم نے کہا یہ اسلام کی خدمت نہیں بلکہ ملک دشمنی ہو رہی ہے، ملک رکے گا تو غریب کیسے کمائے گا۔

No comments:

Post a Comment